سلگتے ساحلوں پہ اب کہاں اس کا نشاں ھو گا

سلگتے ساحلوں پہ اب کہاں اس کا نشاں ھو گا
خدا جانے مرا دل کس نگر ھو گا ، کہاں ھو گا،

وہ کیسے دیکھ سکتا ھے زمیں کے خاک زادوں کو
یقینن اس کی نظروں میں ابھی تو آسماں ھو گا،

ذرا سی شام ڈھلنے تک وہ میرا تھا، نہ میں اس کا
نہ سوچا تھا مرا سایا مجھی سے بد گماں ھو گا،

امیر محفل رنداں ، میرا ھر لفظ چن لینا
کہ بزم حشر میں بھی بس یہی میرا بیاں ھو گا،

قیامت سے بہت پہلے قیامت جھیل آئے ھیں
ابھی کیا ھے سزا میری ابھی کیا امتحاں ھو گا،

چلو اب گھر کو چلتے ھیں بڑی مدت ھوئی ، تائب !
خفا مجھ سےمکیں ھوں گےبہت اجڑا مکاں ھو گا،

ڈی ایم تائب ،

Dm Taib Poetry

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s