اسے کہنا۔۔۔۔۔

اسے کہنا۔۔۔۔۔
ہمیں کب فرق پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔؟
کہ۔۔۔۔۔۔۔!
ہم تو شاخ سے ٹوٹے ہوئے پتّے۔۔۔۔۔۔۔
بہت عرصہ ہوا ہم کو۔۔۔۔۔۔
رگیں تک مر چکیں دل کی۔۔۔۔۔۔
کوئی پاوٴں تلے روندے۔۔۔۔۔۔
جلا کر راکھ کر ڈالے۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا کے ہاتھ پر رکھ کر۔۔۔۔۔۔
کہیں بھی پھینک دے ہم کو۔۔۔۔۔
سپردِ خاک کر ڈالے۔۔۔۔۔۔
ہمیں اب یاد ہی کب ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
کہ ہم بھی ایک موسم تھے۔
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s