Image

December Lot Aya Hai

December Lot Aya Hai

Wo mujh Ko Sonp Gya Fursatain December Me

Wo mujh Ko Sonp Gya Fursatain December Me

December Agya Janaan

ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺟﺎﻧﺎﮞ
ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﺍﮎ ﺳﺎﻝ
ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﮐﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻣﯿﮟ
ﺍﺗﺮ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ
ﯾﮧ ﺩﻝ ﭘﮭﺮ ﺭﻭﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮨﮯ
ﺗﻤﮭﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﯾﺎﺩ ﮨﮯ ﺟﺎﻧﺎﮞ ؟
ﺍﺳﯽ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﺩﺳﻤﺒﺮ ﻣﯿﮟ
ﺗﻤﮩﯽ ﻧﮯ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ
ﮐﮧ ﻧﯿﺎ ﺟﻮ ﺳﺎﻝ ﺁﮮ ﮔﺎ
ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﻞ ﮐﮯ ﺭﮨﻨﺎ ﮨﮯ
ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﻭﻋﺪﮮ
ﺑﮩﺖ ﺳﯽ ﺍﻥ ﮐﮩﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ
ﮨﻤﯿﮟ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﯿﮟ
ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﻧﺌﯽ ﻧﻈﻤﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ
ﻟﮑﮭﻨﯽ ﮨﯿﮟ
ﻣﮕﺮ ﺟﺎﻧﺎﮞ !
ﻭﮨﯽ ﺭﺍﺗﯿﮟ ، ﻭﮨﯽ ﺷﺎﻣﯿﮟ
ﻭﮨﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ، ﻭﮨﯽ ﻧﻈﻤﯿﮟ
ﻣﺠﮭﮯ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺩﺳﻤﺒﺮ ﻟﻮﭦ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ
ﻣﮕﺮ
ﺗﺮﺍ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ ؟
ﺩﺳﻤﺒﺮ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺟﺎﻧﺎﮞ

ﺗﮩﻤﺘﯿﮟ ﺗﻮ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ

ﺗﮩﻤﺘﯿﮟ ﺗﻮ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﻣﯿﮟ
ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﻧﮯ ﮐﯽ ﮐُﭽﮫ ﺳﺰﺍ ﺗﻮ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ
ﻟﻮﮒ ﻟﻮﮒ ﮨﻮﺗﮯ
ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺧﺒﺮ ﺟﺎﻧﺎﮞ !
ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍِﺭﺍﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﺑﺴﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﮯ ﺭﻧﮓ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﺩﻝ ﮐﯽ ﮔﻮﺩ ﺁﻧﮕﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﮐﮯ
ﺯﺧﻢ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﺘﻨﮯ ﮔﮩﺮﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﺐ ﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﯾﺴﯽ ﺑﮯ ﮔﻨﺎﮦ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ
ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﮐﻮﻧﮯ ﮐﮭﺪﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭُﭗ ﮐﮯ ﮐﺘﻨﺎ ﺭﻭﺗﯽ ﮨﯿﮟ
ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﺳﮯ
ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺞ ﺑﯿﺎﻧﯽ ﺳﮯ
ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺭﻭﺍﻧﯽ ﺳﮯ ﺩﺍﺳﺘﺎﻥ ﺳﻨﺎﻧﮯ
ﺍﻭﺭ ﯾﻘﯿﻦ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ
ﺳﭻ ﮐﮯ ﻏﻤﺰﺩﮦ ﺩﻝ ﺳﮯ ﻟﮓ ﮐﮯ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺗﮩﻤﺘﯿﮟ ﺗﻮ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ
ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﻣﯿﮟ
ﺗﮩﻤﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﮕﻨﮯ ﺳﮯ
ﺩﻝ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﻮ ﺟﺎﻧﺎﮞ
ﺍﺏ ﻧﮉﮬﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻧﺎ
ﺗﮩﻤﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﮈﺭﻧا

اسے کہنا۔۔۔۔۔

اسے کہنا۔۔۔۔۔
ہمیں کب فرق پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔؟
کہ۔۔۔۔۔۔۔!
ہم تو شاخ سے ٹوٹے ہوئے پتّے۔۔۔۔۔۔۔
بہت عرصہ ہوا ہم کو۔۔۔۔۔۔
رگیں تک مر چکیں دل کی۔۔۔۔۔۔
کوئی پاوٴں تلے روندے۔۔۔۔۔۔
جلا کر راکھ کر ڈالے۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوا کے ہاتھ پر رکھ کر۔۔۔۔۔۔
کہیں بھی پھینک دے ہم کو۔۔۔۔۔
سپردِ خاک کر ڈالے۔۔۔۔۔۔
ہمیں اب یاد ہی کب ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
کہ ہم بھی ایک موسم تھے۔
Image

December Yaad Ata Hai-Sad December Poetry

December Yaad Ata Hai-Sad December Poetry

Image

A Ishq Hamari Galyon Me

Faraz Ahmad Faraz

Image

Kisi Se Dil Ki Hikayat Kabhi Kaha Nahi Ki

Ahmad Faraz

Image

Wo Is Andaaz Ki Mujh Se Muhabat Chahta tha

Judai Poetry